‘Revolutionary’, not ‘terrorist’ Bhagat Singh scares the right-wing- Abhinav Kumar


yellow strip


Rashtriya Swayamsevak Sangh (RSS) ideologue Dinanath Batra is seeking a ban on the famous book India’s Struggle for Independence by Bipan Chandra, Mridula Mukherjee, Aditya Mukherjee, Sucheta Mahajan, and KN Panikkar. According to a recently published report in The Hindu, Batra has written a letter to the Union HRD ministry complaining about Bhagat Singh being labelled a “revolutionary terrorist” in the book. Also, family members of Bhagat Singh have complained about it. This is not the first time that Batra is demanding a ban on a book. He forced publishers of The Hindus: An Alternative History by Wendy Doniger to withdraw the book.

Why do people get offended when they read a book? What does it tell us about people who get offended by reading a book? The book by Chandra and others which is at the centre of the issue has sold more than one lakh copies and almost every History student must have read it in parts or full.

Also read: How a ‘terrorist’ Bhagat Singh debate exposes Indian historians

It is also considered to be one of the best books on India’s struggle for Independence. A lot of people have read what is written about Bhagat Singh and other revolutionaries in the book but most of them would not agree that Bhagat Singh was a terrorist of any kind. Why?

Reading a book is like entering into a conversation with the writer. The relationship between a book and its reader must not be passive. The reader tries to understand the ideas presented in the book in light of his own experiences and simultaneously examines his own views and perceptions according to what has been mentioned in the book. Most people would not consider Bhagat Singh a terrorist because it is written as such. The co-authors of the book had clarified that the word “terrorist” did not have pejorative meaning when the book was written.

bipan-chandra_050216062035.jpgThe book that has been at the centre of the controversy.

We must enter into a conversation with the the writers and see what it is trying to convey while understanding the claim made by Batra. One of the chapters in the book is titled “Bhagat Singh, Surya Sen, and the revolutionary terrorists” and Batra is probably referring to this chapter. We must examine how the book describes “revolutionary terrorists”.

“Bhagat Singh, born in 1907 and a nephew of the famous revolutionary Ajit Singh, was a giant of an intellectual. A voracious reader, he was one of the most well read of political leaders of the time.”

Also read: If Bhagat Singh is a ‘terrorist’, India must rewrite all its history

Is it an attempt to describe a terrorist? I don’t think so. Batra might disagree. Here is something he should ponder over. Who would call someone “a giant of an intellectual” if he wishes to portray him as a terrorist? When the book tells us that Bhagat Singh turned to Marxism and started believing in mass movements, it must have given a perception to Batra that a terrorist is being described here.

Batra’s belief that it is a description of a terrorist was further strengthened where the book emphasises that Bhagat Singh, along with Sukhdev, organised students for political actions. In the current political scenario of India Marxism, mass movements, and student politics are enough to shape Batra’s views about people who associate themselves with these ideas.

Also read – Bhagat Singh no ‘terrorist’: RSS has sadly killed India’s tradition

The book also discusses Bhagat Singh’s view on communalism and how he considered it as one of the biggest problems India was facing. This might jeopardise the plan of appropriating Bhagat Singh by the BJP for its political benefits. It quotes the freedom fighter and other revolutionaries at length about the meaning of revolution. It tells us that revolution for them was not militancy and violence but the change of an unjust order and abolition of capitalism and class domination. This description of Bhagat Singh must have made some of Batra’s patrons uncomfortable.

The book describes the incident of Bhagat Singh’s hanging in following words: “Bhagat Singh became a household name in the land. And many persons, all over the country, wept and refused to eat food, attend schools, or carry on their daily work, when they heard of his hanging in March 1931.”

It is surely not talking about hanging of a terrorist. It tells us that Bhagat Singh was a man whom the country adored and loved. It tells us that his revolutionary thoughts connected with the masses to a degree unmatched by any other leader of his time except Mahatma Gandhi.

The book describes their trial in courts in the following words: “Their fearless and defiant attitude in the courts – every day they entered the courtroom shouting slogans ‘Inquilab Zindabad’, ‘Down, Down with Imperialism’, ‘Long Live the Proletariat’ and singing songs such as ‘sarfaroshi ki tamanna ab hamare dil mein hai‘ and ‘mera rang de basanti chola‘ – was reported in newspapers”.

What can we understand about Bhagat Singh and his ilk when we read this? To me, he seems to be in love with the people of his country and is willing to sacrifice his life happily for the sake of independence and social justice. Does the book portray him as a terrorist in the way we understand terrorism? Definitely not. I am not sure how Batra understood it though.

Surya Sen, another “revolutionary terrorist” is also described in the book which makes it pretty clear what it means by the word revolutionary terrorist. The chapter describes Surya Sen as “a brilliant and inspiring organiser, was an unpretentious, soft-spoken and transparently sincere person”.

Although Batra might find this as a description of a terrorist but he certainly does not sound like a terrorist to me. The book tells us that Surya Sen made the ultimate sacrifice in order to show the youth of Bengal the path of organised armed struggle and encouraged them to sacrifice themselves for the noble cause of independence.

The chapter concludes by pointing out the limitation of revolutionary terrorists by highlighting their inability to connect to the masses and activate them into political action. The final few sentences of the chapter sums up, what the book means by the word revolutionary terrorism: “They made an abiding contribution to the national freedom movement. Their deep patriotism, courage, determination, and sense of sacrifice stirred the Indian people. They helped spread nationalist consciousness in the land; and in northern India the spread of socialist consciousness owed a lot to them.”

Does it sound like terrorism? Not to me. It puts very eloquently their importance and contribution in the nationalist movement and also points out their limitations. The book is a strong rebuttal of any charge of terrorism and violence on the part of the revolutionaries. It seeks to clarify what they meant by revolution and their strong desire not only for independence but also for social justice.

I don’t know which part of the chapter he found disturbing enough to demand a ban on it. I think the word that offended him is not “terrorist” but “revolutionary”. Probably Batra and others subscribing to his ideology are scared of revolutionary politics.

They are not confined to the RSS-BJP combine but also include all those people who want to strip nationalism of all its revolutionary potential and use it to demand unquestioned loyalty from the masses. They are scared that the portrayal of Bhagat Singh as a revolutionary would harm their politics of nationalism which is trying to strip Bhagat Singh of his revolutionary character.

They want to appropriate him for the so-called nationalist cause and in order to do so, they must annihilate all descriptions of Bhagat Singh as a revolutionary who was inspired by Marx and Lenin and who strongly believed in the cause of social justice through revolution and mass movements.


( Courtesy:  https://www.dailyo.in/politics/bhagat-singh-rss-dinanath-batra-bjp-wendy-doniger-nationalism-indian-freedom-struggle/story/1/10399.html)



کیا جناح کے ساتھ وہ ہوا جو نواز کے ساتھ ہورہا ہے؟

Jinnah and Sikandar Hayat

جناح-سکندر حیات خان اور دیگر لوگ




کیا واقعی جناح کے ساتھ وہی ہوا جو نواز شریف کے ساتھ ہورہا ہے؟


وجاہت مسعود نواز شریف کی محبت میں ضلال المبین کی اتھاہ گہرائیوں میں خود کو دفن کرچکے ہیں۔ایسے لگتا ہے کہ اب تو وہ پاکستان کی سیاسی تاریخ بھی اسی لیے پڑھتے ہیں کہ کہیں سے کوئی کمزور لائن /سطر ملے اور یہ جھٹ سے اسے نواز شریف کے حق میں استعمال کردیں۔اس مرتبہ انہوں نے پاکستان کی تاریخ پہ کلہاڑا چلایا ہے۔ویسے میں ان کو باور کراتا چلوں کہ آل انڈیا مسلم لیگ کی تاریخ اور سب سے بڑھ کر خود جناح صاحب کی سیاست کو مسلم قومیت، دو قومی نظریہ، مسلم ریاست، اردو، اور ان سب سے پہلے محمد بن قاسم، اورنگ زیب عالمگیر،شیخ احمد سرہندی سے الگ کرنا بہت مشکل کام ہے۔ یہ کام تاریخ کو مسخ کیے بغیر ممکن نہیں ہے۔نواز شریف کے کیمپ میں کھڑا لبرل دانشور طبقہ اپنی دانش کو دھوکے اور مکر میں لپٹی ایسی تحریروں کے حوالے کررہا ہے جو بعد میں خود ان کے لیے شرمندگی کا باعث بنیں گی۔


ہم نے آزادی اس لئے حاصل کی تھی کہ دو قومی نظریے سے نجات حاصل کر کے ایک قوم بنائی جائے۔ ہندوستان میں دو قومیں آباد تھیں۔ ایک وہ جنہیں انگریز کی غلامی قبول تھی۔ دوسری قوم بیرونی حکمرانوں سے آزادی چاہتی تھی تاکہ اپنی دھرتی پر اپنی حکومت قائم کر سکیں۔ ہندو مسلم مذہبی اختلاف تو دراصل معیشت اور معاشرت کے تاریخی جبر کا استعارہ تھا۔

لیکن کیا جناح واقعی ایسا سمجھتے تھے کہ پاکستان بننے کے بعد دو قومی نظریہ ختم ہوگیا؟ کیا جناح نے پاکستان بننے کے بعد یہ سمجھ لیا تھا کہ مذہب کی بنیاد پہ سیاست کا پاکستان بننے کے بعد خاتمہ ہوگیا ہے۔اس سے ملتا جلتا سوال آل انڈیا مسلم ليگ کی جنرل کونسل کے اجلاس میں کراچی کے اندر پیش آیا تھا۔آل انڈیا مسلم لیگ کی جنرل کونسل میں ایک قرارداد تو یہ پیش ہوئی تھی کہ مسلم لیگ کی جو تنظیم انڈیا میں ہے اسے ختم کردیا جائے اور سیکولر طرز سیاست کو اختیار کرلیا جائے۔جناح نے اس کی بھرپور مخالفت کی اور دوسرا اس کونسل میں مولانا جمال الدین ،حسین شہید سہروردی سمیت کچھ رہنماؤں نے نئی ریاست پاکستان کو سیکولر ریاست کے طور پہ چلانے کی تجویز پیش کی جسے ایک بار پھر جناح نے مسترد کردیا۔یہ درست ہے کہ جناح نے مذہبی پیشوائیت کی طرز کی ریاست بنانے سے پاکستان کو انکار کیا اور ان کے خیال میں اسلامی تصور ریاست میں شہریت کے معاملے میں مذہبی شناخت کی بنیاد پہ کسی سے امتیازی سلوک نہیں کیا جاسکتا تھا۔لیکن کیا جناح کی اس تعبیر کو ان کے ساتھی ماننے پہ تیار تھے؟ اس کا جواب تو جناح کی موت کے ایک سال بعد 1949ء میں قرارداد مقاصد کی منظوری سے ہی مل گیا تھا۔لیکن جناح مسلمانوں کو چاہے وہ پاکستان میں رہتے ہوں یا ہندوستان میں ان کو مسلمان قوم مانتے تھے ہاں یہ اور بات ہے وہ پاکستان میں رہنے والی مسلمان قوم کو پاکستانی ریاست کا اور ہندوستان میں رہنے والی مسلمان قوم کو ہندوستانی ریاست کا وفادار رہنے کا حکم دیتے تھے۔ان کے خیالات پیچیدگی سے بھرے اور وقتی عملیت پسندانہ ضرورتوں سے لبریز تھے اور تضاد بار بار ان میں در آتا تھا۔لیکن وجاہت مسعود اور ان جیسے دیگر لبرل کا مسئلہ یہ ہے کہ ان کو پاکستان کی تحریک سے کوئی ایک آدمی تو درکار ہے جسے یہ سیکولر قوم پرستی کا معمار قرار دے سکیں۔ جناح کا سیکولر ازم اگر کوئی تھا اور لبرل ازم کچھ تھا بھی تو وہ دو قومی نظریہ، مسلمان قومیت اور پاکستانی ریاست کے اسلامی ریاست ہونے کے تصور سے ہی نکلتا تھا۔

چودہ اور پندرہ دسمبر 1947ء کو خالق دینا ہال کراچی میں آل انڈیا مسلم لیگ کی جنرل کونسل کا اجلاس منعقد ہوا۔اس اجلاس میں 320 مسلم لیگ ورکنگ کمیٹی کے ممبران شریک تھے۔160 ممبران کا تعلق تقسیم کے بعد کے ہندوستان سے تھا۔اس اجلاس میں شریک یو پی لیجسلیٹو اسمبلی کے ممبر اور آل انڈیا مسلم لیگ کی ورکنگ کمیٹی کے رکن مولانا جمال الدین عبدالوہاب پسر مولانا عبدالباری فرنگی محلی بھی شریک تھے۔وہ کہتے ہیں کہ طویل بحث و مباحثے اور پاکستان کے بطور ریاست بارے سٹیٹس کے سوال پہ غور وفکر کے بعد آخر میں جناح نے خطاب کیا اور کہا:


Let it be clear that Pakistan is going to be a Muslim State based on Islamic Ideals. It was not going to be ecclesiastical State. In Islam there is no discrimination as far as citizenship is concerned. The whole world even UNO, has chrachtarized Pakistan as a “Muslim State”.


There Must be a Muslim League in Hinustan. If you are thinking of anything else you are finished. If you want to wind up Muslim League you can do so; but I think it would be a great mistake. I know there is an attempt by Maulana Azad and others are trying to break identity of Muslim of India. Do not allow it. Do not do it.

Jamal Mian…. P209 Published by Oxford Press Pakistan2017


اس سے آگے وجاہت مسعود لکھتے ہیں


یاد رہے کہ 1937 میں نوابزادہ لیاقت علی خان اور نواب اسماعیل کی کوششوں سے یونینسٹ پارٹی اور مسلم لیگ میں ایک سمجھوتہ ہوا تھا۔ اس سمجھوتے پر قائد اعظم نے کبھی دستخط نہیں کیے۔ اسے باضابطہ پیکٹ کے طور پہ اچھالنے میں سید نور حسین نامی صحافی بنیادی کردار تھے۔ اس زمانے میں سیاسی رہنماؤں کو ٹیلیفون نہیں کیا جاتا تھا ڈپٹی کمشنر اپنے دفتر میں بلا کر ریاست کا ڈاکٹرائن سمجھا دیتا تھا۔ 1946ء میں اسی طریقہ کار کی مدد سے الیکشن جیتنے والے جوق در جوق مسلم لیگ میں شامل ہوئے تھے، پاکستان آزاد ہو گیا لیکن دو قومی نظریہ زندہ رہا۔


وجاہت مسعود کی مشکل اصل میں یہ ہے کہ اگر وہ جناح-سکندر پیکٹ اور یونینسٹ پارٹی سے روابط کو جناح کی حکمت عملی مان لیتے ہیں تو پھر وہ جناح سے ان کے ساتھ کام کرنے والی مسلم لیگ پنجاب کی اس جاگیردار قیادت کی دھوکہ دہی کیسے ثابت کرپاتے اور ‘اصلی سچی عوامی مسلم لیگ’ کے اقتدار پرستوں کی لیگ میں بدل جانے کا مقدمہ کیسے ثابت کرپاتے اور جب یہ ثابت نہ ہوتا تو وہ کیسے یہ ثابت کرتے کہ نواز شریف اور ان کی پارٹی سے آج چودھری نثار وہی کررہے ہیں جو ماضی میں لیاقت علی خان اور نواب اسماعیل خان نے جناح کے ساتھ کیا تھا۔

یہ مشکل وجاہت مسعود کی ہی نہیں ہے۔ان سے بہت پہلے عاشق بٹالوی کی بھی تھی۔وہ جناح اور یو پی ، سی پی ، پنجاب، بنگال ،سندھ کے چاگیرداروں ،وڈیروں اور صوبہ سرحد کے خوانین اور بلوچستان کے سرداروں کے درمیان ایک فرق قائم کرکے جناح کو جمہوریت ، مڈل کلاس سیاست اور خاص طور پہ پنجاب کی شہری قیادت کی سیاست کا ترجمان ثابت کرنا چاہتے تھے۔عاشق بٹالوی کو دراصل غصّہ تھا کہ کیسے برکت علی سمیت لاہور شہر کی پنجابی مڈل کلاس کی ایک پرت کی لیگی سیاست کو یونینسٹ پارٹی کے اندر شامل دیہی سیاسی اشرافیہ نے پچھاڑ دیا تھا اور 1946ء کے آتے آتے وہی مسلم لیگ کے مامے چاچے بن گئے۔جناح کو اس سارے عمل میں اپنی طرف دکھانے کے لیے عاشق بٹالوی نے جناح-اسکندر پیکٹ یا سمجھوتے بارے ایک نئی تعبیر گھڑی اور انھوں نے سارا ملبہ راجا غضنفر علی خان، لیاقت علی خان، نواب اسماعیل خان پہ گرایا۔بلکہ جناح-سکندر پیکٹ کیسے آل انڈیا مسلم لیگ کے  مسلمانوں کی واحد نمائندہ جماعت ہونے کے دعوے کو  کے 37ء انتخابات میں مسلم اکثریت کے علاقوں میں بدترین شکست سے جو جھٹکا لگا تھا سے سنبھلنے کا موقعہ میسر آیا تھا اسے منفی بناکر دکھادیا۔اور وجاہت مسعود بھی اسی راستے پہ چلے ہیں۔ جناح-ان کے خیال میں سکندر پیکٹ /معاہدہ 1937ء سرے سے کچھ بھی نہیں تھا۔اور جناح کا یونینسٹ پارٹی کے سربراہ سر سکندر حیات سے کوئی انڈر اسٹنیڈنگ نہیں ہوئی تھی۔انھوں نے اپنے طور پہ اپنے پڑھنے والوں کے سامنے یہ انکشاف کرنے کی کوشش کی ہے کہ یہ سب سید نور احمد خان کا کیا دھرا ہے۔انھوں نے اپنے قاری کو یہ بھی نہیں بتایا کہ ان کے دعوے کی بنیاد عاشق بٹالوی کے دعوے پہ ہے جس کا ثبوت خود عاشق بٹالوی بھی پیش نہیں کرپائے۔

اس حوالے سے وجاہت مسعود اپنی ذاتی خواہشات سے ہٹ کر ایک مقالہ

Jinnah-Sikandar Pact: Revisited

BY  Javed Haider Syed, Kalim Ullah Baraich, Amjad Abbas Khan

دیکھ لیتے تو وہ اپنے قاری کو گمراہ کرنے کا باعث نہ بنتے ۔میں اس معادے بارے مذکورہ بالا مقالے سے کچھ اقتباسات دے رہا ہوں۔اس سے بہت واضح ہوجاتا ہے کہ جناح  پنجاب ، بنگال ، یوپی، سی پی، سندھ ، شمال مغربی سرحدی صوبہ میں مسلمانوں کی علاقائی طاقتور پارٹیوں کو کمزور کرکے ان کے طاقتور لوگوں کو آل انڈیا مسلم لیگ میں لانا چاہتے تھے اور یونینسٹ پارٹی کے سردار سکندر حیات سے جو سمجھوتہ ہوا وہ بھی اس پالیسی کا ایک حصّہ تھا۔اس سے یہ بات صاف سمجھ آتی ہے کہ جناح کو یوننیسٹ پارٹی کے اندر شامل جاگیرداروں کے ٹوڈی ازم سے مسئلہ نہ تھا اور نہ ان کی جاگیریں اور برٹش کالونیل سسٹم میں ان کے سٹیٹس سے کوئی مسئلہ تھا۔جناح نے 1937ء سے 1946ء تک کسی بھی مرحلے پہ مسلم اکثریتی علاقوں میں بڑی زمینداریوں، تعلقہ داری کو ختم کرنے یا کانگریس کی جانب سے زرعی اصلاحات کے نعرے کو اپنے منشور کا حصہ بنایا تھا۔جناح آل انڈیا کانگریس کی جانب سے آل انڈیا مسلم لیگ کو مسلمانان ہند کی واحد نمائندہ پارٹی کے دعوے کو چیلنح کیے جانے کے خلاف سیاست کررہے تھے اور ان کو واحد مسلم نمائندہ جماعت ہونے کے دعوے کے سچے ثابت کرنے کی ضرورت انگریز سے ہندوستان کے اندر انتقال اقتدار پہ اپنے مطالبات منوانے کے لیے تھی۔تو یہ جدوجہد اپنی نوعیت کے اعتبار سے بہرحال  انقلاب آفریں نہ تھی جیسے وجاہت مسعود بتانے کی کوشش کررہے ہیں۔جناح اس دوران یو پی –سی پی- بنگال اور دیگر علاقوں کے اپنے ساتھ شامل جاگیردار سیاست دانوں سے کسی تضاد میں نہیں تھے بلکہ انھوں نے تو 36ء سے 1948ء تک مسلم لیگ میں شامل ہونے والی زمیندار اشرافیہ اور ایک چھوٹی سی شہری مڈل کلاس اور چھوٹی سی سرمایہ دار کلاس کے درمیان ثالثی اور پل کا کردار ادا کیا۔یہی وجہ ہے جناح نے نہ تو راجا غصنفر سمیت یونینسٹ پارٹی اور آل انڈیا مسلم لیگ کی دوہری رکنیت رکھنے والوں کو پارٹی سے نکالا اور نہ ہی ان کو پارٹی اجلاسوں میں شرکت سے روکا۔جناح کا رویہ برکت علی اور  اقبال سے ان کی باہمی خط و کتابت میں دیکھا جاسکتا ہے۔اس لیے وجاہت مسعود صاحب نواز شریف کو جناح سے ملانے کے لیے جناح بارے جھوٹ مت گھڑیں۔



Syed Noor Ahmad has specified the details of efforts of the Raja and Mamdot to bring about this settlement. He has also explained that why Jinnah-Sikandar contract came only after a breach between the League and the Congress. About

Sikandar’s earlier hesitation, he has inscribed,” Hither to, it was

not clear what shape, the efforts of the League-Congress understanding would take and also the term and conditions of the understanding, if reached, were under question, and also that the Unionist party be able to abide by those conditions·”74

Batalvi challenges the story of Syed Noor Ahmad that Raja was present in the Lucknow session and worked in drafting the agreement. He proclaims that, “For three or four years the Raja dared not to face the Quaid-i-Azam due to his act of deserting the Muslim League.”75 The statement by Batalvi has no grounds because the incidents after wards proved that the Raja remained very close to Jinnah and enjoyed his confidence.

The Raja was  very much present in all the sessions of League after the 1937

elections. He had performed as a link between the Unionist party and Jinnah. The act of Raja was approved by Jinnah when he rejected the blames and allegations put on Raja and his group. The claim of Syed Noor Ahmad that the Raja was mainly responsible for the ratification of Jinnah-Sikandar Pact has been qualified by Sardar Shaukat Hayat (son of Sikandar), in an interview with the biographer of his father emphasizing the role of Raja by commending his decision to join the Unionist party as a means of influencing Muslim Unionists to later join the League. He further  particularized,”Sikandar Hayat, with the acknowledged support of  Ghazanfar Ali Khan and others, wanted to show that he stood by

Muslims at large.”76

Another critic Sajjad Zaheer maintained that “the League tolerated the Unionist Government in the province, so that it might be used as a pawn on the chess board of Indian politics.”85

At the same time the Jinnah-Sikandar Pact could not be called a pact in the real sense of the word as it was vague and it neither clarified the position of the League nor that of the Unionist party. It was the product of the need.

Jinnah viewed the situation in the Punjab quite differently from Allama Iqbal and Barkat Ali. In June 1936, when the session of the League Central Parliamentary Board met at Lahore and the Unionist party was in open conflict with the League, Allama Iqbal asked Jinnah to expel those members of the Unionist party who

were also the members of the League, from the Muslim League Council. But for certain reasons, the later did not consider it appropriate to take penal action  against those members.93He also did not endorse Allama Iqbal’s approach in his controversy with  Sikandar’s group. The details of the strong worded  correspondence between them can be found in the Letters of Iqbal to Jinnah, especially at the pages 29, 31and 32. Jinnah’s letter to  Barkat Ali is the proof of his diverse approach to the issue.94

مقالہ نگار لکھتے ہیں

Such was the story of the Punjab politics where the League had to start from below zero in post 1935 period. It had to face hostility from the provincial leadership. However, a rebel group of the Unionist party came into contact with them but later on being won over by their god-father rallied against league during

the election even after expiration of Fazli. But it is to the acclaim  of Raja that he carved a working alliance between the two foes and was able to muster a strong band from the hostile camp and managed to get an agreement concluded the Jinnah-Sikandar pact. But it was the most controversial and disturbed span of time  which witnessed even accosting of the poet-philosopher of the  Muslim Ummah and the prominent thinker of idea of Pakistan.  This may have been diplomacy of Jinnah who did not assert in  those critical years but after death of Sikandar a relatively weaker  Unionist leader Malik Khizar Hayat Tiwana was in front of him.  League’s position on all India level had been strengthened and now it was a time to stress and establish her writ in the Punjab. So Jinnah challenged the “Boy-leader”, and the compromising period was changed into an aggressive and assertive party standpoint.


Why Hazaraz are being attacked and killed? NCHR’s report obfuscates main reason behind Hazara Genocide – Aamir Hussaini

images (4)


Not Understanding of Agonies of Hazara community but spreading more obfuscation.



Recently National Commission for Human Rights in Pakistan has released a report titled”Understanding the Agonies of Ethnic Hazaraz”. Title of this report skips Shia identity of Hazara community which is main reason behind their target killing and genocide.


Official websites of daily Dawn, Tribun Express and others (Which are pro liberal and civil society elites news websites) made headline of this report inclined to obfuscating main reason of target killing of Hazara Community in Quetta:



509 Hazaras killed in terror-related incidents during last five years in Quetta: NCHR report


Dawn Report

This is not just for the Hazara community that informed the NCHR’s report but for all people of Pakistan.





509 Hazaraz killed, 627 injured over last five years in Quetta: NHCR


509 Hazaras Killed In Last Five Years In Quetta


Not a single mainstream English newspaper used term ‘Shia-Hazra’ or did not inform us the reason behind their killings and who are behind their genocide and marginalization.


Interesting thing is that this report, according to news appeared in mainstream English liberal Press, ruled out any conflict of the community with Baloch and Pashtun communities in the region. It quoted a National Party senator, Kabir Muhammad Shahi, saying that “there has been no issue of Balochs or Pashtuns with Hazaraz in Balochistan”. But this report never tells us about actual miscreants and reason of their enmity with Hazara Community.


This is open secret that Takfiri Deobandi militant organizations like Tehreek Taliban Pakistan-TTP, Laskar-i-Jhangvi-LeJ, Jamat-i-Ahrar, ISIS affiliated groups who are active and ideological ally of banned(just in papers but its leadership is roaming freely all over Pakistan and its Baluchistan chapter is spreading hatred against Shia-Hazara community living in Quetta) Ahle Sunnat Waljammat-ASWJ aka SSP are involved in target killing of Hazra community due to their Shia identity.


Our mainstream media, mainstream civil society organizations and Liberal elite dominating in both sectors often time obfuscate Shia identity of Hazara Community which plays main role in their target killing and attacks made by Takfiri Deobandi militants, when they discuss agonies of ethnic Hazras of Quetta, Baluchistan.



When you discuss plight of Hazra community in Quetta then you should keep in your mind one very important and basic premise that this is not question of just ethnic cleansing but this also Shia cleansing. And our liberal elite civil society censors this premise every time.



This liberal elites in majority (not only having dominating positions in mainstream electronic and print media of Pakistan but in International liberal media establishment also) spread false binaries when discuss Shia killings in Pakistan. They never clearly tell their readers and audiences about Takfiri Deobandi Militancy in Pakistan and its role not only in marginalization and running genocide campaign for Shia but for Sufi Sunnis, Christians, Ahmadis and Hindus also.



They discuss faith based violence without pointing out Takfiri Deobandi Militancy and violence in Pakistan and its role in Shia-Hazra genocide particularly and in Shia genocide in Pakistan.



You can see that not a single Pashtun, Baluch nationalist politician who was contacted by report compilers on Hazra Shia genocide in Quetta uttered name of Takfiri Deobandis and not revealed their role in this dirty war against Shia-Hazra.



National Commission for Human Rights in Pakistan was set up by Government of Pakistan and its majority members have been nominated from Liberal elites of Pakistani civil society which have already very biased ideas on question of Shia-genocide and Shia-Hazra killings. They adopted old prejudiced and biased discourse on this issue and obfuscated reality.

استاد سبط جعفر:جس کا مولا تھا میں اس کا مولا علی



آج اٹھارہ مارچ 2018ء ہے۔اور آج سے پانچ سال پہلے اسی دن پروفیسر سبط جعفر پرنسپل گورنمنٹ ڈگری کالج لیاقت آباد(لالو کھیت) کراچی اپنی موٹر سائیکل پہ گھر واپس لوٹ رہے تھے کہ ایک سپیڈ بریکر ان کی بائیک جیسے ہی آہستہ ہوئی تو موٹر سائیکل پہ سوار دو افراد نے ان پہ نائن ایم ایم پسٹل سے فائر کھول دیا۔ان کو متعدد گولیاں ماری گئی تھیں اور وہ موقعہ پہ ہی شہید ہوگئے۔اپریل 2013ء میں ان کے دو قاتل گرفتار کرلیے گئے۔اس وقت کے ایس ایس پی فیاض احمد نے پریس کانفرنس میں صحافیوں کو بتایا کہ پروفیسر سبط جعفر کا قتل سپاہ صحابہ پاکستان/اہلسنت والجماعت کے کارکن شیخ محمد اطہر عرف خالد اور محمد شاہد عرف چورن نے کیا۔یہ دونوں سپاہ صحابہ پاکستان کے رکن تھے اور ساتھ ہی لشکر جھنگوی کے بخاری گروپ کا حصّہ تھے جس کا الحاق تحریک طالبان پاکستان سے ہے۔

پروفیسر سبط جعفر،استاد سبط جعفر کے نام سے مشہور تھے۔وہ کراچی کے تعلیمی، سماجی فلاحی اور ادبی حلقوں میں بہت عزت و احترام کی نظر سے دیکھے جاتے تھے۔ان کے شاعری اور تعلیم کے میدان میں سینکڑوں شاگرد تھے۔کئی ادبی و سماجی تنظیموں کے قیام میں انھوں نے اہم ترین کردار ادا کیا تھا۔انتہائی درویش صفت آدمی تھے۔برسوں سے لوگ ان کو ایک موٹر سائیکل پہ سوار پورے شہر میں ایک کونے سے دوسرے کونے میں آتے جاتے دیکھتے تھے۔ ان کے بارے میں یہ بات مشہور تھی کہ آپ جب بھی ان کو مدد کے لیے پکاریں گے استاد موٹربائيک پہ آپ کے پاس حاضر ہوجائیں گے۔اور اس معاملے میں وہ رنگ،نسل،ذات پات،فرقہ،برادری کسی چیز کی پرواہ نہیں کریں گے۔ان کے قتل نے کراچی میں بسنے والے ہر شخص کو ہلا کر رکھ دیا تھا۔

یہاں پہ سوال یہ جنم لیتا ہے کہ اتنا ہر دل عزیز اور درویش صفت آدمی کو کیوں مارا گیا؟ان کو مار کر کن مقاصد کو حاصل کرنے کی کوشش کی گئی ؟

یہ ایک ایسا سوال ہے جس سے معاملہ کرتے ہوئے پاکستان کا مین سٹریم میڈیا ابہام پرستی،جواز مائل یا بعض  اوقات ذمہ داران کی شناخت سے نفی کی جانب چلا جاتا ہے۔

پاکستان کے قیام سے قریب قریب 14 سال پہلے 1929 کے آخر اور 1930 کے آغاز میں لکھنؤ میں دارالعلوم دیوبند سے تعلق رکھنے والے مولوی عبدالشکور لکھنؤی،لاہور سے تعلق رکھنے والے احراری دیوبندی مولوی اظہر علی نے آل انڈیا مسلم لیگ کی مرکزی قیادت کے خلاف اچانک سے مذہبی کارڈ استعمال کرتے ہوئے تکفیری مہم شروع کی۔اور ایسے شواہد موجود ہیں کہ دیوبندی سخت گیر مولویوں کی اس تکفیری مہم کے پیچھے آل انڈیا کانگریس میں موجود مہا سبھائی عناصر تھے جنھوں نے ان مولویوں کو کافی پیسہ فراہم کیا۔

حال ہی میں آکسفورڈ پریس پاکستان سے  چھپنے والی کتاب’ جمال میاں-دی لائف آف مولانا جمال الدین عبدالوہاب فرنگی محلی بھی ہمیں اس مسئلے پہ کافی روشنی ڈالتی محسوس ہوتی ہے کہ کیوں دیوبندی علماء کے کانگریس نواز  دھڑے جمعیت علماء ہند اور مجلس احرار اسلام کی قیادت نے تکفیری مہم کا آغاز کیا۔

اس کتاب کے مصنف فرانسس رابنسن نے بہت عرق ریزی سے تحقیق کرکے دارالعلوم فرنگی محل کے مولانا عبدالباری فرنگی محلی ،ان کے بیٹے مولانا جمال الدین عبدالوہاب فرنگی محلی کا خلافت کمیٹی میں جمعیت علماء ہند کی دیوبندی قیادت اور بعد میں بننے والے مجلس احرار کے ابن سعود کی طرف جھکاؤ اور صوفی سنّی مسلمانوں کو دھوکا دینے کی تفصیل مہیا کی ہے۔اور بتایا ہے کہ اس کے بعد دارالعلوم فرنگی محل کا جھکاؤ آل انڈیا مسلم ليگ کی طرف ہوگیا۔اور مولانا عبدالباری فرنگی محل کے بیٹے مولانا جمال الدین فرنگی محلی نے لکھنؤ کے راجہ آف محمود آباد، ممبئی پریذیڈنسی کے اصفہانی برادران کے ساتھ ملکر خاص طور پہ یوپی،سی پی ، بنگال اور ممبئی پریذیڈنسی میں کانگریس نواز دیوبندی دھڑے کے  مولویوں کا اثر توڑنے کے لیے بھرپور مہم چلائی۔

دارالعلوم فرنگی محل اور راجا آف محمود آباد کے درمیان باہمی تعلقات کی ایک علامتی اہمیت یہ تھی کہ یہ صوفی سنّی اور شیعہ مسلمانوں کے درمیان مثالی ہم آہنگی کا سبب بن رہی تھی۔یو پی،سی پی،بنگال،اور ممبئی کے اندر آل انڈیا مسلم لیگ کی بڑھتی ہوئی مقبولیت نے کانگریس کو بوکھلادیا تھا اور جو سرمایہ دار اور زمین دار جمعیت علمائے ہند اور مجلس احرار کو سرمایہ فراہم کرتے تھے ان کا دباؤ بھی مولویوں پہ بڑھ گیا۔

قائد اعظم محمد علی جناح،راجا آف محمود آباد،خان لیاقت علی خان،خواجہ ناظم الدین ؛ایم ایچ اصفہانی اور دیگر صف اول کے لیگی قائدین یا تو شیعہ تھے یا صوفی سنّی تھے۔ان کو نیچا دکھانے کے لیے احرار اور جمعیت علمائے ہند کے مولویوں نے اینٹی شیعہ اور اینٹی صوفی سنّی بیانیہ اختیار کیا۔اور ان کی پوری کوشش تھی کہ مسلمانوں کے درمیان شیعہ-سنّی منافرت کی آگ بھڑکادی جائے اور اس طرح سے آل انڈیا مسلم لیگ کی سیاست کو بھی غیر موثر بنادیا جائے۔

اس مہم کے پیچھے خود بنیے ساہوکاروں اور بزنس برادری کا بھی مفاد وابستہ تھا۔اصفہانی برادران،سیٹھ حبیب، آدم جی اور ایسے ہی کچھ اور مسلم سرمایہ دار کمیونٹی خاص طور پہ ممبئ اور کلکتہ کے اندر سے اپنے بزنس کو دیگر علاقوں میں پھیلانے کی کوشش کررہے تھے۔اصفہانی اور آدم جی کا کاروبار مڈل ایسٹ،افریقہ کے ساتھ ساتھ ہندوستان کے شہروں میں پھیل رہا تھا اور اس میں ان کا مقابلہ ہندؤ مرکنٹائل بزنس کمیونٹی سے تھا۔اور اس وقت کی ہندوستانی سوسائٹی میں فرقہ پرست تحریکوں کے پیچھے اس تضاد کا بھی بڑا دخل تھا۔اور جمال الدین فرنگی محلی کو بھی اصفہانی برادران نے تجارت میں گھسیٹ لیا تھا،اس بارے میں جمال الدین نے بتایا،

‘Jinaah had asked Mirza Ahmed(Isphani)to help Jamal Mian. He said,according to Mirza  Ahmed: ‘The Maulwis and Ulemaof Jamiatul Ulama are accusing me a lot of problems…. But I have met one young Maulwi who is equalto all of them and he is great orator.I went to him to stand   on his feet so he does not have any financial problems.’

Jamal Mian,P126,Oxford Press Pakistan

جمعیت علماء ہند اور مجلس احرار اسلام جن کو کانگریس پورے ہندوستان کے مسلمانوں کا ترجمان بناکر پیش کرتی تھی اور آل انڈیا مسلم لیگ کو وہ ایک فرقہ پرست جماعت بناکر دکھاتی اور اس نے اپنے حامی کانگریسی ملّاؤں کی صوفی سنّی ، شیعہ اور احمدیوں کے خلاف سرگرمیوں سے آنکھیں بند کررکھی تھیں،جیسے اس نے ہندؤ مہا سبھائیوں کی سرگرمیوں پہ آنکھیں بند کی ہوئی تھیں۔حقیقت میں کانگریس مسلمانوں کے درمیان بدترین فرقہ پرستی کا کارڈ دیوبندی انتہا پسند مولویوں کے سہارے کھیل رہی تھی۔اور اس کھیل کی یوپی کے اندر سب سے بڑی مزاحمت دارالعلوم فرنگی محل کے فرزند ارجمند مولانا جمال میاں اور راجا آف محمود آباد کی طرف سے کی جارہی تھی۔یہ حقیقت ہے کہ صوفی سنّی اور شیعہ مسلمانوں کی ایک بڑی اکثریت کانگریسی ملّاؤں کی سازش کا ادراک کرنے میں کامیاب ہوچکی تھی۔اور تو اور خود دیوبندی علماء میں مولوی اشرف علی تھانوی کی قیادت میں بھی ایک گروپ دارالعلوم دیوبند اور جمعیت علماء ہند کی سیاست کو پہچان گیا تھا اور ان سے الگ ہوگیا تھا۔راجا آف محمود آباد کا مولانا جمال الدین فرنگی محلی سے کیا تعلق تھا،اس سے پہلے آپ راجا آف محمود آباد کے بارے میں تھوڑا سا جان لیں۔

The Raja Mahummad Amir Ahmad Khan of Mahmudabad was arguably an even closer friend of Jamal Mian Than Dr Faridi.The two were distantly related. But the Raja,as the largest Musim landholder in the UP,lived a different life with differen responsibilities. Neverthless, they shared a love of Urdu and Persian poetry(the Raja’s Takhullus was ‘Mahboob’..) They were both particularly devout. This said,that Raja was a Shia, indeed a prominent supporter of a Shia missionary college, the Madrasat-ul-Waizeen and Jamal Mian was a devout Sunni seemed to make no difference to their personal coloseness.

Jamal Mian..P140-41 Oxford Press Pakistan

ایک خط میں راجا آف محمود آباد جمال میاں کو لکھتے ہیں

Maulvi Hazrat Hujjatul Islam,Faqih ul Mominin, Moin ul Millet, Qari o Hafiz ul Quran, Maulvi, Allama Jamaluddin Abdul Wahab Saheb, Sullamahu, I give my respect to your letter,affection,truthfulness and wisdom…the eye of effection which you have bestowed on this poor,wretch faqir,Amir.

We got the lawyer,sought an omen(Istakhara)and turned this lawyer into Quaid-i-Azam.”

انیس سو چالیس کے ایک خط میں انہوں نے لکھا

“Sarkar Maulana I wish you Slaams. The Mullah runs to Masjid and I run to you.”

تو ہندوستان کے سب سے اہم اور بڑے صوبے کے دو بڑے مسالک سنّی اور شیعہ کے دو انتہائی اہم اور بڑے اثر کے حامل سیاست دانوں کے درمیان اس ہم آہنگی نے واقعی آل انڈیا کانگریس اور اس کے اتحادی مولویوں کو گڑبڑا دیا تھا۔کانگریسی دیوبندی مولویوں نے اس کا توڑ اینٹی شیعہ اور اینٹی صوفی سنّی پروپیگنڈے سے کیا اور شیعہ اور صوفی سنّی اسلام دونوں کے خلاف کفر،شرک اور بدعت کا ہتھیار استعمال  کرنا شروع کردیا۔

پاکستان کی تشکیل ان مولویوں کے لیے بہت بڑی ہزیمت اور شکست کا باعث تھی اور انھوں نے اس کا بدلہ لینے کے لیے پاکستان کے اندر اپنے فرقہ پرستانہ ڈسکورس کو پھیلانا بند نہ کیا۔اور یہ قائد اعظم محمد علی جناح، خان لیاقت علی خان،جمال میاں،راجا آف محمود آباد سمیت کئ صف اول کے سیاست دانوں کی شیعہ اور صوفی سنّی شناخت کو کبھی فراموش نہیں کرسکے۔اور دارالعلوم دیوبند کے اندر سے اٹھنے والے تکفیری فتنے نے اپنے آپ کو منظم کرنے کا سلسلہ جاری رکھا۔

اسّی کی دہائی میں دارالعلوم دیوبند کے تکفیری فاشسٹ منظم نیٹ ورک کو آل سعود کی ایرانیوں سے لڑائی،سی آئی فنڈڈ افغان جہاد اور جنرل ضیاء الحق کی آمریت نے مزید پھیلنے اور اپنی عسکریت پسند مشین کو اور ہلاکت انگیز بنانے کا موقعہ فراہم کردیا۔انجمن سپاہ صحابہ پاکستان کی شکل میں اس تحریک کو پھر سے زندہ کیا گیا جو مجلس احرار اور جمعیت علماء ہند کے مولویوں نے یوپی اور پنجاب میں شیعہ اور صوفی سنيوں کے خلاف شروع کی تھی۔

اس تکفیری مہم کا سب سے بڑا ہدف محرم اور میلاد،عرس و میلوں کی ثقافت تھی۔اور اس ثقافت کے جتنے بھی پروان چڑھانے والے تھے وہ اس تکفیری فسطائی تحریک کے دشمن ٹھہرگئے۔اور ان کے خلاف بدترین پروپیگنڈا مشین متحرک ہوئی اور ساتھ ساتھ پاکستان میں صلح کلیت اور سب کے ساتھ امن کا پرچار کرنے اور آل بیت اطہار سے محبت اور وابستگی کا اظہار کرنے والے شاعر،دانشور،ادیب ان کے پروپیگنڈے،سعودی فنڈنگ،ضیاء الحقی اسٹبلشمنٹ کی مدد سے تیار ہونے والے عسکریتی دہشت گرد نیٹ ورک کا سب سے بڑا ہدف قرار پائے۔

سپاہ صحابہ پاکستان/اہلسنت والجماعت دیوبند کے اندر سب سے بڑا منظم تکفیری فاشسٹ تنظیمی نیٹ ورک ہے جس کی سرپرستی میں تکفیری عسکریت پسند ایک بڑا نیٹ ورک موجود ہے۔اس کا سب سے بڑا مقصد شیعہ اور سنّی مسالک کے درمیان نفرت،دشمنی اور لڑائی کو پروان چڑھانا ہے اور یہ صوفی اسلام سے بھی اسی لیے نفرت کرتے ہیں کہ وہ ان کی منافرت پہ مبنی تحریک کو مدد فراہم نہیں کرتے اور پاکستان میں شیعہ سنّی جنگ کا میدان سجانا نہیں چاہتے۔

استاد سبط جعفر اپنی شاعری اور تعلیمی میدان میں خدمات کے زریعے سے شیعہ اور سنّی مسلمانوں کے درمیان پل کا کردار ادا کرنے میں لگے ہوئے تھے۔وہ محرم کی ثقافت کے مشترکہ ہونے پہ اصرار کرتے اور میلاد و عرس و میلوں کو بھی اپنی ثقافت قرار دیتے تھے۔سپاہ صحابہ کی تکفیریت کا مشن اس سے متاثر ہورہا تھا۔انہوں نے ایک دن استاد سبط جعفر کے فن کے سبب ان کو موت کے گھاٹ اتار دیا۔بالکل اسی طرح جیسے انہوں نے معروف صوفی سنّی قوال امجد صابری کو موت کے گھاٹ اتارا تھا۔امجد صابری کے قاتلوں نے خود اعتراف کیا کہ ان کو امجد صابری کے شیعہ اور سنّی مخلوط اجتماعات میں آنے جانے پہ سخت تکلیف تھی۔

تکفیری فاشزم کا نصب العین یہ ہے کہ جو آدمی بھی شیعہ-سنّی مشترکات پہ زور دے اور ان کے درمیان ہم آہنگی اور میل جول پہ اصرار کرے اس کو کافر،مرتد، گستاخ اور بے دین کہہ کر قتل کردو۔

استاد سبط جعفر، امجد علی صابری، پروفیسر ڈاکٹر حیدر علی سمیت سینکڑوں نامور لوگ صلح کلیت اور شیعہ-سنّی ہم آہنگی کے پرچارک ہونے کی وجہ سے قتل ہوگئے۔اور قاتل ایک ہی ذہنیت تھی جسے ہم تکفیری دیوبندی ذہنیت کہتے ہیں۔اور اس بات پہ تکفیریوں کو تو مرچیں لگتی ہی ہیں ساتھ ساتھ نام نہاد لبرل،ترقی پسند اور کئی ایک لیفٹ کا ماسک چڑھائے لوگوں کے منہ بھی بگڑ جاتے ہیں۔لیکن سچ بات کہنے سے ہمیں کون روک سکتا ہے۔

استاد سبط جعفر کے قتل سے شیعہ-سنّی يکانگت میں اور اضافہ ہوا ہے۔اور تکفیری فاشزم اور بے نقاب ہوا ہے۔جس طرح پوری دنیا میں تکفیری فاشزم کی علمبردار جماعتوں اور دہشت گردوں کو منہ کی کھانی پڑ رہی ہے پاکستان میں بھی ان کی شکست نوشتہ دیوار ہے۔استاد سبط جعفر اور امجد علی صابری جیسوں کا خون ناحق رائیگاں نہیں جائے گا۔


پشتون تحفظ تحریک اور بہار پشتون



پشتون تحفظ موومنٹ-پی ٹی ایم کے نام سے اس وقت خیبرپختون خوا اور فاٹا کے پشتون بولنے والی نوجوانوں کی ایک سماجی تحریک سامنے آئی ہے۔پی ٹی ایم کا چہرہ اس وقت منظور پشتین نام کا ایک نوجوان ہے،جس کے خیالات کو کہا جاسکتا ہے کہ پاکستان کے انگریزی پریس اور غیر ملکی نشریاتی اداروں خاص طور پہ یورپ اور امریکی زرایع ابلاغ میں کافی کوریج مل رہی ہے۔

پشتون تحفظ موومنٹ کے تین مطالبات بہت ہی برمحل ہیں۔ ماورائے عدالت قتل پہ جوڈیشل کمیشن کا قیام، راؤ انوار کی برآمدگی،اور لاپتا افراد کو برآمدگی  ہونی چاہئیے ۔

لیکن پی ٹی ایم کو سوشل میڈیا پہ کچھ قوتیں ایک اور رنگ سے پیش کررہی ہیں۔

پاکستان میں سوشل میڈیا پہ لبرل پرتیں خاص طور پہ وہ جن کے خیال میں مذہبی دہشت گردی کا جہادی و تکفیری نیٹ ورک پاکستان کی فوج اور انٹیلی جنس ایجنسیز کی پراکسیز کے سوا کچھ بھی نہیں ہے،ان کی جانب سے بھی پشتون تحفظ موومنٹ کو بہت زیادہ سپورٹ مل رہی ہے۔

ان کی جانب سے بھی پاکستان میں جہاد ازم، عسکریت پسندی اور اس کے ساتھ جڑی بڑے پیمانے پہ دہشت گردی کا سب سے بڑا اور واحد ذمہ دار پاکستان کی فوج بلکہ وردی کو ٹھہرایا جارہا ہے۔

پاکستان میں لبرل لیفٹ کی ترجمان پاکستان عوامی پارٹی جس کا آج کل واضح جھکاؤ پاکستان مسلم لیگ نواز کی جانب ہے،وہ پشتون تحفظ موومنٹ کے بیانیہ کو پوری طاقت سے سپورٹ کررہی ہے۔

بی بی سی،وائس آف امریکہ، ریڈیو ڈویچے، وآئس آف جرمنی،نیویارک ٹائمز،واشنگٹن پوسٹ جیسے بڑے غیر ملکی انٹرنیشنل لبرل پریس اسٹبلشمنٹ اور ‘دہشت گردی کے خلاف امریکی جنگ’ کے حامی صحافی اور این جی او تھنکرز بھی پی ٹی ایم کی جانب بہت بڑا جھکاؤ رکھے ہوئے ہیں۔

پاکستانی لبرل،لبرل لیفٹ اور انٹرنیشنل لبرل پریس و سول سوسائٹی کا ایک بڑا حصّہ پی ٹی ایم اور منظور پشتین میں اسقدر دلچسپی کیوں لے رہا ہے؟ اور ان کو اپنے بڑے پیمانے پہ کوریج کیوں مل رہی ہے؟ یہ سوال اپنی جگہ پہ بڑے اہمیت کے حامل ہیں۔

یہ لبرل و لبرل لیفٹ لابیاں اکثر وہ ہیں جنھوں نے امریکہ کے افغانستان اور عراق پہ حملوں کی یا تو حمایت کی تھی یا اس کی مخالفت کرنے سے سرے سے انکار کردیا تھا۔پاکستان میں لبرل نے دہشت گردی کے خلاف امریکی سامراجی اور اس کی اتحادی ممالک کی جنگی اور فوجی مداخلت کی پالیسیوں کو سپورٹ کیا۔اور ان میں سے اکثر امریکی جنگ کے حامی بنکر سامنے آئے۔افغانستان پہ عوامی نیشنل پارٹی-اے این پی ، پشتون خوا ملی عوامی پارٹی، پشتون سول سوسائٹی کے بڑے بڑے نام افغانستان پہ امریکی جنگ کے حامی بنے اور انھوں نے امریکی جنگ کی مخالفت میں کچھ بھی نہیں کہا۔بلکہ جب آمریت کا دور ختم ہوا تو انھوں نے سوات طرز کے فوجی آپریشن کی حمایت کی۔اس لبرل لابی کی جانب سے بار بار یہ مطالبہ سامنے آتا رہا کہ وزیرستان سمیت پورے فاٹا اور خیبرپختون خوا میں پھیلتی طالبانائزیشن،جہاد ازم اور عسکریت پسندی کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کی ضرورت ہے۔شمالی وزیرستان،جنوبی وزیرستان، خیبر ایجنسی، اورکزئی ایجنسی،مالاکنڈ سوات،کوہستان سب جگہ ہونے والے فوج آپریشنوں کو پاکستانی لبرل نے کھلی سپورٹ فراہم کی۔

پاکستان کی تمام سیاسی جماعتوں بشمول مذہبی پارلیمانی جماعتوں ، پاکستان کا جملہ لبرل و قدامت پرست پریس چند ایک کو چھوڑ کر آپریشن ضرب عضب،آپریشن ردالفساد، نیشنل ایکشن پلان،پاکستان پروٹیکشن آرڈیننس، فوجی عدالتوں کے قیام،رینجرز کی پنجاب سمیت سب صوبوں میں دائرہ کار بڑھانے کی سپورٹ کرتا رہا۔

پاکستان میں اکثر وبیشتر وہ لبرل جو پشتون تحفظ موومنٹ کو ‘بہار پشتون’ قرار دے رہے ہیں،پشتون تحفظ موومنٹ کے پشتون علاقوں میں حقوق  فراہم  کرنے کے مطالبات کی سپورٹ کررہے ہیں وہ پشتون تحفظ موومنٹ کے  چہرے پہ  اپنے سب سے بڑے بیانیہ ‘یہ جو دہشت گردی ہے اس کے پیچھے وردی’ اور ‘دہشت گردی کے پیچھے پاکستانی فوج ہے’   چسپاں کررہے ہیں یا پشتون تحفظ موومنٹ کے بہت سارے مطالبات کو اس ایک مطالبے کے پردے میں لپیٹ رہے ہیں۔

منظور پشتین سے بی بی سی اردو کے خدائے نور نے انٹرویو کیا۔اس انٹرویو کو پاکستانی سوشل میڈیا پہ بھی بہت پروموٹ کیا جارہا ہے۔اس انٹرویو میں بی بی سی کا نمائندہ منظور پشتین سے پوچھتا ہے کہ وزیرستان میں نیک محمد سے لیکر بیت اللہ محسود تک جو نوجوان شدت پسندی (حالانکہ تحریک طالبان پاکستان کی گوریلا، خودکش، ڈیوائس کنٹرول بم دھماکہ اور بارودی سرنگیں بچھائے جانے  اور لوگوں کے سروں سے فٹبال کھیلنے اور 80 ہزار پاکستانیوں کی جانیں لینے کے مجموعی پروس اور اس میں شامل شیعہ نسل کشی، صوفی سنّی مسلمانوں کی ہلاکتیں ،کلیساؤں پہ حملے یہ سب کے سب محض شدت پسندی نہیں بلکہ کھلی دہشت گردی تھی جو ابتک جاری و ساری ہے۔)اس کی وجہ کیا ہے؟تو منظور پشتین اس کے جواب میں بالکل وہی یک رخی جواب کے ساتھ سامنے آتا ہے جو اس ملک میں لبرل لابی کا ہمیشہ سے رہا ہے۔اس کے خیال میں پورے خیبرپختون خوا اور فاٹا کے اندر جہاد ازم،عسکریت پسندی اور دہشت گردی کی پرداخت کی ذمہ دار پاکستان کی فوج اور انٹیلی جنس ایجنسیاں ہیں۔وہ 80ء دہائی میں پاکستان-امریکہ-سعودی عرب اور دیگر مغربی سرمایہ دار بلاک کے رکن ممالک کے باہمی گٹھ جوڑ،پاکستان کی سلفی،دیوبندی وہابی مذہبی قیادت کی موقعہ پرستی سے ملکر کھڑی ہونے والی جہادی سلطنت اور نیٹ ورک کا سارا الزام صرف اور صرف جرنیلوں اور انٹیلی جنس افسران پہ دھرتے آئے۔امریکی حکومتوں، سی آئی اے، سعودی عرب سمیت مڈل ایسٹ کی فنڈنگ کے عوامل کو وہ بالکل نظر انداز کرتے ہیں۔وہ مذہبی بنیادوں پہ ہونے والی دہشت گردی اور اس کے دیوبندی عسکریت پسندی اور اس کے پیچھے کارفرما عالمی جہادی نیٹ ورک اور اس کی مقامی سرپرست لابیوں میں صرف اور صرف فوج اور انٹیلی جنس ایجنسیوں کو (ان میں بھی ان کے اندر موجود ضیاء الحقی باقیات کو نہیں بلکہ ساری فوج اور انٹیلی جنس ایجنسیوں کو ) سنگل آؤٹ کرکے ذمہ دار ٹھہراتے ہیں۔

   اے این پی ،پشتون خوا ملی عوامی پارٹی سمیت پشتون قوم پرستوں کی اکثریت جن کا تعلق پشتونوں کی ابھرتی ہوئی مڈل کلاس سے ہے  پاکستان کی فوج اور انٹیلی جنس ایجنسیوں کو ساری خرابی کا ذمہ ٹھہرانا چاہتے ہیں اور اس سارے عمل میں ان سے یہ کوئی پوچھنے والا نہیں ہے کہ نائن الیون کے بعد تو پاکستان کی کیا پنجابی،کیا سندھی، کیا بلوچ،کیا پشتون لبرل مڈل کلاس چاہے اس کا تعلق قوم پرست سیکولر جماعتوں سے تھا یا وہ صحافت یا این جی اوز میں لبرل سیکولر سوچ کے علمبردار کہلاتے ہوں امریکہ کی دہشت گردی کے خلاف جنگ کی حامی تھی۔یہ پاکستان کے امریکہ کے ساتھ اتحاد کی بھی بالکل مخالف نہیں تھی۔بلکہ یہ سول سوسائٹی اور لبرل دماغ ہمیں اب سرد جنگ کے زمانے سے شروع ہونے والے جہاد ازم،مذہبی دہشت گردی کے خاتمے کی نوید سنارہے تھے۔پاکستان کے لبرل کے درمیان اگر کسی معاملے میں اختلاف اگر تھا تو وہ دہشت گردی کے خلاف امریکی جنگ سے نہیں بلکہ اسے لیڈ کون کرے گا؟ پہ تھا۔پاکستان کی لبرل پرتوں کا ایک حصّہ چاہتا تھا یہ جنگ امریکی پرچم  تلے پاکستانی جمہوری چہرے لڑیں۔

اب بھی اس لبرل کیمپ کا خیال یہ ہے کہ نائن الیون کے بعد امریکہ افغانستان کے اندر مطلوبہ نتائج نہ پاسکا اور وہ افغانستان کو جاپان یا مغربی جرمنی نہیں بناسکا تو اس کی ذمہ داری پاکستانی ریاست کے جرنیل اور انٹیلی جنس افسران ہی ہیں۔جبکہ اس معاملے میں علاقائی طاقتوں اور سب سے بڑھ کر امریکہ بہادر اور سعودی عرب کا کوئی تعلق نہیں ہے۔ اور اس ناکامی میں کروڑوں ڈالر بٹورنے والی مغربی سرمایہ دار نواز این جی اوز کا کوئی ہاتھ نہیں ہے۔

پشتون تحفظ موومنٹ نے پشتون سماج کے اندر بڑے پیمانے پہ جہادی اور انتہا پسند مدرسوں اور تنظیمی نیٹ ورک پہ مشتمل ریڈیکل تکفیری یا جہادی آئیڈیالوجی کے حامل مراکز اور ان کے بڑے بڑے ناموں بارے پراسرار سی خاموشی اختیار کرلی ہے۔ایسا لگتا ہے کہ اتنے بڑے تکفیری جہادی سعودی فنڈڈ نیٹ ورک کو محض کسی ادارے کی پراکسی خیال کرتے ہیں۔جیسے امریکہ سمیت مغرب نواز سامراجی لبرل کے خیال میں پاکستان سمیت پورے جنوبی ایشیاء میں پھیلے دہشت گرد نیٹ ورک کے پیچھے پاکستانی فوج یا انٹیلی جنس ایجنسیاں ہی ہیں۔اور وہ جہاد ازم کو پراکسی سے ہٹ کر دیکھنے کو تیار نہیں ہیں اور پراکسی بھی بس پاکستانی ملٹری اور انٹیلی جنس اداروں کی۔

اتنے خام خیال کے ساتھ کیا پاکستان کے پشتون علاقوں میں بالخصوص جہاد ازم، تکفیر ازم، جہادی نیٹ ورک، تحریک طالبان پاکستان،داعش، جماعت الاحرار، لشکر جھنگوی، القاعدہ اور سب سے بڑھ کر ان کا نظریاتی شراکت دار اور سہولت کار جیسے سپاہ صحابہ پاکستان وغیرہ ہیں کی جانب بالکل آنکھیں بند کرکے کیا پشتونوں کے حقوق کے تحفظ کی بات ٹھوس عملی نتائج دے پائے گی؟

پشتون تحفظ تحریک کا سب سے کمزور حصّہ اس تحریک سے غیر پشتون یعنی سرائیکی اور ہندکو بولنے والی آبادی کی بے گانگی ہے۔جبکہ اور پشتون تحفظ موومنٹ کی جانب سے پاکستان کے حکمران طبقات کی طرف ‘نسلی شاؤنزم’ کے ساتھ دیکھنے کا رویہ انتہائی خطرناک ہے۔اس تحریک کی طرف شیعہ اور صوفی سنّی پشتونوں کا رجحان نہیں ہے اور اس کی ایک وجہ تو پی ٹی ایم کے جلسے جلوسوں،کارنر اجلاسوں اور کمپئن کے دوران تکفیری –جہادی ریڈیکل دیوبندی گروپوں کا نمایاں نظر آنا ہے۔

اس لیے دہشت گردی،جہاد ازم، تکفیر ازم اور دہشت گردی کے خلاف جنگ پہ پی ٹی ایم کولبرل سامراجیوں کے یک رخی اور انتہائی خام نظریہ پہ نظر ثانی کرنے اور اپنی دوست و دشمن قوتوں کے انتخاب میں بھی مزید غور و خوض کی ضرورت ہے۔ ورنہ یہ بہار شام کی طرح جعلی بہار ثابت ہوگی اور امریکی سامراجی، جگہ تلاش کرنے والے طالبان اور اس تحریک کو پروجیکٹ میں بدل کر ڈالر لوٹنے والوں کو یہ سانس لینے کا موقعہ فراہم کرے گی۔


مقامی آدمی کا موقف-پہلا حصّہ

رفعت عباس


میں ویسے تو بڑا سوشل لگتا ہوں۔یہاں وہاں سب جگہ میرے جاننے والے رہتے ہیں،یا وہ اور میں ایک دوسرے کو  جانتے ہیں یا میں ان کو جانتا ہوں یا وہ مجھے جانتے ہیں۔باہر ایسے لگتا ہے جیسے میں کوئی ایسا آدمی ہوں جس کا میل میلاپ اتنا ہے کہ میرے پاس کسی کو ملنے کی فرصت نہیں ہوگی۔لیکن اندر جب جھانکتا ہوں تو گھپ اندھیرا دکھائی دیتا ہے۔

میرے پڑدادا،پڑدادی اور دادا دادی اور ان کے دیگر لوگ 47ء میں ایک بڑی مار کاٹ کے سامنے بڑی مشکل سے جان بچاکر پاکستان آئے۔میرا خاندان اصل میں اودھ کی تہذیب اور ثقافت سے جڑا ہوا تھا اور  کچھ لوگ جمنا کے اس پار اس وقت کے پنجاب اور آج کے ہریانہ کے حصار،بھوانی، روہتک اور اس زمانے کے سونی پت اور آج کے کروکیشتر میں جمنا کے کنارے رہ رہے تھے۔گویا میرے خاندان کا کوئی تہذیبی شعور تھا تو وہ اودھی-ہریانوی کا آمیزہ تھا اور اس میں ہریانوی،برج بھاشا،بھوجپوری،اودھی اور ان سب کے آمیزے سے تشکیل پانے والی ہندوستانی جو آگے چل کر ہندی-اردو میں بدل گئی بھی ہمارے گھرانے کا امتیاز بن گئی تھی۔

لیکن اس ہجرت نے ہمارے ساتھ یہ کیا کہ ہم اس ساری تہذیب اور ثقافت سے کٹ گئے اور ایک دم سے ایک اور ثقافتی ماحول میں پہنچ گئے۔میرا خاندان ہجرت کرکے تین خطوں میں آگیا جو بنیادی طور پہ انڈس/سندھو تہذیب سے جڑے تھے۔ایک حصّہ تو لاہور اور اس کے گردنواح میں آکر جم گیا۔دوسرا حصّہ ملتان اور اس کے گردونواح میں اور تیسرا کراچی اور سندھ میں۔اور میری جیسی نسل جس نے 70ء کے عشرے میں شعور سنبھالنا شروع کیا وہ ان تینوں علاقوں میں فٹ بال بنی گھومتی رہی۔ہمارے خاندان،برادری اور علاقے کے لوگوں نے تو یہ کیا کہ دوسرے غیر پنجابی ہندوستانیوں کے ساتھ ملکر ریاست پاکستان میں پنجابی اور یوپی سی پی کے اشراف کی جانب سے پیش کیا جانے والا نیا بیانیہ اپنا لیا۔اور وہ یہ تھا کہ ‘سب مسلمان ایک قوم ہیں۔ان کی قومی زبان اردو ہے اور ریاست کا مذہب اسلام ہے۔’ اور انہوں نے پاکستان کی حکمران اشرافیہ کی جانب سے مقامیت کا انکار اور اس سے ابھرنے والی کسی بھی شناخت کو اسلام اور ریاست کے خلاف سازش ہے کا بیانیہ بھی قبول کرلیا۔

آج جب ستر سال گزرگئے ہیں تو غیر پنجابی علاقوں سے ہجرت کرکے آنے والے ہندوستانی مہاجروں کے گھرانوں کی نئی نسل کی بھاری اکثریت جن کے گھروں میں آج بھی ان کے علاقوں کی بولیاں اور لہجے مروج ہیں کے پاس نہ تو اپنے بزرگوں کی سرزمین کی ثقافت اور زبان کا کوئی شعور موجود ہے اور وہ چھٹ گئی اور چھڑادی گئی مقامیت کا ہلکا سا بھی احساس بھی اپنے اندر نہیں پاتے اور دوسرا المیہ یہ ہے کہ ستر سال سے وہ جس مقامیت میں رہتے ہیں،نہ اس زبان سے ان کی وجودی جڑت ہے اور نہ اس مقامیت نے ان کی روحوں کے اندر جگہ بنائی ہے۔اکثریت کو سرائیکی، سندھی بالکل بھی نہیں آتیں اور پنجابی تو خود پنجابیوں کو نہیں آتی ہندوستانی مہاجروں کی نسل کو کیا آئے گی۔

بندوبست پنجاب میں جی ٹی روڈ کے ساتھ علاقوں میں جہاں پہ مشرقی پنجاب جو اب بقیہ ہندوستان کا حصّہ ہے پنجابی آپس میں ایک دوسرے کے ساتھ بولی جانے والی زبان ہے۔اور پھر وہ علاقے جو کبھی جنگل بیلے ہوا کرتے تھے اور کینالائزیشن اور کالونائزیشن نے اس خطے میں پنجابی آبادکاروں کو بڑی تعداد میں لاکر بسایا اور مقامی باشندے کی زبان’جانگلی’ قرار پائی اسے اکثریت پنجابی کا لہجہ مان کر قبول کرلیا ہے۔اس علاقے کے وٹو ہوں، سیال ہوں، نول ہوں، سپرا ہوں،چدھڑ ہوں،مہانے ہوں، کٹانے  ہوں ان سب نے اپنے آپ کو پنجابی کا حصّہ مان لیا ہے۔اور ان علاقوں میں بسنے والے ہریانوی،دہلی والے اور یوپی کے شہروں اور دہیاتوں سے یہاں آکر بسنے والوں نے اپنی ہندوستانی زبانوں اور لہجوں کو گھروں میں کسی حد تک باقی رکھا لیکن نئی نسل میں خود کو اردو سے جوڑنے کا رجحان زیادہ ہے۔ایک بہت چھوٹی سی اقلیت ہے جو انگریزی سے جڑگئی ہے۔جب پنجابی جن کی مادری زبان ہے ان کا مکالمہ پنجابی میں نہیں ہے تو ہندوستانی مہاجروں کی اولاد کا کیوں ہوگا۔

اس لیے پنجابی جن کی مادری زبان ہے ان کی اکثریت اور اردو یا دیگر ہندوستانی زبانیں بولنے والے مہاجروں کی جو اولاد ہے ان کی اکثریت کے ہاں’مقامیت’ اور اس سے جڑی ثقافت ،زبانیں، بولیاں اور اس پہ استوار ہونے والی قومیت جیسی اصطلاحیں کسی ‘جناتی زبان’ کے الفاظ لگتی ہیں۔اور اس لیے بندوبست پنجاب میں ان کو یہ سمجھنا بہت مشکل ہوجاتا ہے کہ قومی تضاد، قومی سوال کی بنیاد کیوں بنتا ہے۔

ریاست پاکستان کے بننے سے پہلے اور بننے کے بعد ایک تاریخی مصنوعی شعور پیدا کیا گیا۔اور آج یہ مصنوعی تاریخی شعور ہماری نصابی کتابوں،اردو پرنٹ و الیکٹرانک میڈیا اور بڑی تعداد میں سرکاری لائن کی پیروی کرنے والے ادیبوں،ماہرین تاریخ و سماجیات یہاں تک سائنس دانوں کی علوم طبعی پہ لکھی کتابوں میں بھی تاریخ کا آغاز یا تو 712ء میں محمد بن قاسم کے سندھ پہ حملے سے ہوتا ہے یا اس کا آغاز وسط ایشیاء اور افغانستان سے ہوئے حملوں سے ہوتا ہے۔اور اس تاریخ سے مقامیت  بالکل خارج کردی جاتی ہے۔

لیکن سب مہاجر ایسے نہیں تھے۔کچھ ایسے بھی تھے جو وہاں ہندوستان میں ہی اس زمانے میں کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا اور اس زمانے کی سوشلسٹ و قومی آزادی کی تحریکوں سے جڑگئے تھے اور ان کے ہاں کسی نہ کسی طرح مقامیت اور اس کی اہمیت کا احساس زندہ تھا۔ان میں کچھ میرے خاندان کے لوگ بھی تھے۔جنھوں نے مجھے اودھی،بھوجپوری،برج بھاشا،ہریانوی اور اس سے جنم لینے والی ہندوستانی اور خود اردو و ہندی کی مقامی بنیادوں بارے بتایا اور اس کا احساس دلانے کی کوشش کی۔اور پھر جس خطے میں وہ آئے تھے اس خطے کی مقامیت اور اس سے ابھرنے والی زبانوں اور ثقافتوں بارے بھی بتایا۔میرے ابتدائی شعور نےمجھے اپنے اندر ایک عجیب سے گھپ اندھیرے کا احساس دلایا۔اور یہ گھپ اندھیرا میرے اجداد کی جبری ہجرت سے پیدا ہوا تھا اور اس اندھیرے کی وجہ مقامیت میں انجذاب ہونے کا انتہائی سست ترین پروسس تھا۔

جن شہروں میں میرا بچپن،لڑکپن اور پھر جوانی کے دن گزرے وہاں ہجرت کے جبر سے مقامی آبادی تو پہلے ہی رخصت ہوگئی تھی یا ہجرت سے پہلے ‘آبادکاروں’ کی شکل میں وہ پہلے ہی اجنبی تھے۔ان کی جگہ جنھوں نے لی وہ بھی مقامی آبادی کی زبان منڈی،بازار میں بس ضرورت کے تحت بولتے تھے اور مقامیوں کو شہروں میں آکر یا پڑوس کے مہاجر گھروں کی اکثریت والے چک یا گاؤں میں اپنی زبان ترک کرنا پڑتی تھی۔اسکول،کالج اور یونیورسٹی میں اردو کی باہمی بول چال اور لکھنے پڑھنے کی زبان تھی۔عوام کے جتنے لوگ جو پڑھتے تھے وہ اردو زبان میں تھا۔اور ایسے میں یو پی-سی پی کی مہاجر اشرافیہ اور پنجابی اشرافیہ کا باہمی گٹھ جوڑ اور ان کے جونئیر شراکت دار بلوچ،سندھی، سرائیکی(اس وقت تک یہ خود کو بڑے دھارے میں پنجابی اور چھوٹے دھارے میں ملتانی،ریاستی،ڈیروی وغیرہ کہتے تھے) اشراف جاگیردار اور ایک بہت چھوٹی نہ ہونے کے برابر کی پڑھی لکھی مڈل کلاس بھی اپنے آپ کو اس مصنوعی تہذیب اور ورثے کا امین بتاتی تھی جسے اسلامی تہذیب و ثقافت کا نام دیا گیا تھا جو زیادہ سے زیادہ مسلم اشراف گھرانوں کا چلن کہا جاسکتا تھا۔

یہ آرٹیفیشل،مصنوعی اور زبردستی سے ریاستی طاقت اور جبر اور سب سے بڑھ کر کافی مہارت سے کی جانے والی ہیرا پھیری کے راستے سے تیار کیا جانے والا بیانیہ ہے جو پاکستان کے علاقوں پہ مسلط کردیا گیا اور اس کا سب سے بنیادی مرکز تھا مقامیت کی نفی۔یہ سب کس لیے کیا گیا۔اس کا سب سے بڑی سبب یہ تھا کہ مقامیت کا اثبات کرنے سے جو حکمرانی ہے اسے سب سے پہلے تو برابری کی بنیاد پہ بنگالی،سندھی،بلوچ اور پشتون سیاسی حریفوں سے بانٹنا پڑتا اور ایسا کرنے کی صورت میں ہندوستان سے آنے والی مسلم لیگ کی جاگیردار سیاسی اشرافیہ اور پنجاب کی جاگیردار اشرافیہ اور ایسے ہی پاکستان کی نئی بننے والی برطانوی باقیات میں پہلے سے بندوبست پاکستان کے اندر بابو شاہی میں نمائندگی کا غیر معمولی اور عدم توازن سے بھرپور  سٹرکچر بھی بدلنا پڑتا۔اس حوالے سے جو اقدام اٹھائے گئے ان کا جواز لانے کے لیے قوم،زبان کے سوالوں کو مذہبی بنادیا گیا۔اسلامی زبان کے معیار پہ اردو پورا اتری اور اسلامی قوم کا معیار پاکستانی قوم بن گئی جس کا مطلب تھا مسلمان قوم اور قومیتوں اور اس کی بنیاد پہ ثقافتی طور پہ ہم آہنگ علاقوں کی شناخت کا ہی انکار کردیا گیا۔تاکہ سیاسی،معاشی،آئینی،قانونی حقوق کی مانگ قومیتی بنیادوں پہ کی نہ جاسکے اور اسے ریاست کے خلاف سازش، غداری اور سب سے بڑھ کر اسلام دشمنی قرار دے دیا جائے۔اور ساتھ ساتھ مقامی لہجوں،بولیوں،زبانوں اور اس سے جڑی ثقافتوں کی تحقیر کی جائے،اس کو مہذب ہونے،تعلیم یافتہ ہونے کے خلاف گردانا جائے۔تحقیر و حقارت کو اسقدر عام کردیا جائے کہ مہاجر اور آبادکاروں کی  اولادیں خود اپنے ثقافتی ورثے کی تحقیر کریں اور جو مقامی آبادی ہے وہ بھی اپنے ورثے سے بے گانہ ہوجائے۔اور کسی قسم کی آئین سازی میں اگر ‘فیڈریشن’  کا تصور بروئے کار آئے تو اس کی اکائیوں کو ‘انتظامی’ اکائیاں گردانا جائے ناکہ ان کو ہزاروں سال کے سفر کے بعد تشکیل پانے والی ثقافتوں کی نمائندہ اکائیاں مانا جائے۔کیونکہ اس صورت میں تو مقامیوں کا حق فائق اور اولین ترجیح بن جاتا ہے۔

اس ساری بہت مہارت سے کی گئی ریاستی سطح کی ہیرا پھیری نے پہلے بنگالیوں کو جگایا اور پھر ون یونٹ کے قیام نے یہاں پشتونوں،بلوچ،سندھیوں کو بھی جگادیا۔اور 71ء میں پاکستان کے دولخت ہوجانے اور بنگلہ دیش بننے کے بعد جب 1973ء کا آئین بنا اور اس آئین میں اگرچہ ایک بار پھر فیڈریشن انتظامی اکائیوں کا مجموعہ تھی لیکن اس میں ریاست بہاول پور کے خاتمے اور اس کے بعد آئینی طور پہ بھی وفاق اور صوبوں کے درمیان وسائل کی تقسیم سمیت دیگر جتنے بھی معاملات تھے ان سے آج کی سرائیکی بیلٹ پہ مشتمل خطے کے لوگوں میں بہت شدت سے یہ احساس بیدار ہوا کہ ان کو تو آئینی اور قانونی طور پہ بالکل ہی مٹا دیا گیا ہے۔اور ان کی ثقافت کا  اعتراف بھی کہیں نہیں چہ جائیکہ ان کے دیگر حقوق کو تسلیم کیا جاتا۔اس وقت سے سرائیکی قومی سوال ہماری سیاست کے منظرنامے پہ ابھرا۔

لیکن کیا سرائیکی قوم اور اس کا بطور ایک ثقافتی کمیونٹی ہونے کا جو شعور یہ محض 47ء سے 70ء تک اور پھر 71ء سے 73ء تک ہوئے سوشو-اکنامک اور سوشو-پولیٹکل اقدامات کا ہی نتیجہ ہیں یا یہ ایک بڑے تاریخی پس منظر کا حامل ہے جو اس خطے کے لوگوں میں صدیوں سے لاشعور کا حصّہ بنتا گیا اور پھر سے وقفے وقفے سے ابھرتا رہا؟

میں ہمیشہ سے یہ سمجھتا رہا ہوں  کہ ہمیں یہ سوال کسی پنجابی، سندھی، بلوچ،پشتون سے نہیں کرنا بنتا بلکہ یہ سرائیکی وسیب کے کسی ایسے دانشور شاعر سے کرنا بنتا ہے،جو مقامیت میں آفاقیت کا حامل ہو۔اور وہ اس کے شعری اظہار پہ ہی نہیں بلکہ وہ نثر میں بھی اسے بیان کرنے پہ قادر ہو۔

رفعت عباس سے صحافی منور آکاش ایسا ہی مکالمہ کیا ہے جو ‘مقامی آدمی کا موقف’ کے نام سے سامنے آیا ہے۔اور یہ تاریخی اعتبار سے انتہائی اہم دستاویز ہے۔آئیندہ اقساط میں،میں اسی بارے بات کروں گا۔

(پہلا حصّہ )

منافق کمیونسٹ-چھٹا حصّہ



اس نے یہ سب سناکر کتاب ایک طرف رکھ دی اور کہنے لگی تم ابھی آرام کرو،مجھے جے این یو جانا ہے تھوڑا سا کام کرکے شام تک لوٹتی ہوں۔اس کے جانے کے تھوڑی دیر بعد میں بھی سوگیا تھا۔

میں کافی دیر تک سوتا رہا تھا۔جب میری آنکھ کھلی تو شام کے سات بج رہے تھے۔میں باتھ روم گیا اور نہا دھوکر کپڑے بدل آکر لاؤنج کے طور پہ استعمال ہونے والے کمرے میں بیٹھ گیا۔وہ آٹھ بجے لوٹی۔وہ جیسی فریش گئی تھی،ویسی فریش لگ رہی تھی۔

بور تو نہیں ہوئے۔ اس نے پوچھا



میں انکار میں گردن ہلائی



It’s good. You need some coffee?






‘I come after change’, she said


تھوڑی دیر بعد وہ ہاف سلیو شرٹ اور شارٹ پہنے آئی اور دونوں گھٹنے سیکڑ کر وہ ایک کرسی پہ بیٹھ گئی۔

‘Sorry, my Mujahid Comrade on my harshness last night. And I feel that I consumed all time and never gave you chance to speak about yourself. Now you should tell me about yourself, your life’, She said.



کافی مشکل سوال کردیا ہے تم نے،میں نے اس سے کہا۔خیر کوشش کرتا ہوں،میں اپنے بارے میں کچھ بتاؤں آپ کو۔اور پھر میں نے کہنا شروع کیا:



“میرا نام مستجاب حیدر نقوی ہے۔میں اپنے ماں باپ کے ہاں بس پیدا ہوا تھا۔ میری پرورش میری دادا دادی نے کراچی میں کی تھی۔اور اس پرورش کا مجھ پہ کئی طرح سے اثر ہوا تھا۔میرے دادا اترپریش کے ضلع اعظم گڑھ کے ایک تعلقہ دار سادات گھرانے سے تعلق رکھتے اور دادی لکھنؤ کے ایک شیعہ نواب گھرانے سے۔دونوں گھر سے بھاگ لیے تھے۔دادا اس لیے بھاگے انہوں نے مولوی بننے سے انکار کیا تھا اور دادی اس لیے بھاگیں کہ انہوں نے میٹرک کرنے کے بعد شادی نہیں کرنا تھی۔دونوں اسٹیفن کالج دہلی میں ملے اور ان کی محبت انجمن ترقی پسند مصنفین کے اجلاسوں میں پروان چڑھی اور دونوں نے شادی کرلی۔تقسیم کے وقت یہ دونوں اس وقت کے پنجاب اور آج کے ھریانہ میں حصار شہر میں بطور لیکچرر تعینات تھے۔اور وہیں سے ہجرت کرکے یہ پاکستان کے شہر کراچی چلے آئے۔کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا کے کارڈ ہولڈر تو تھے لیکن کلچرل شیعہ بھی تھے۔اور ساتھ دیگر مذاہب کی ثقافتوں کا احترام بھی کرتے تھے۔ان کے ارد گرد بھی لوگ ایسے ہی تھے۔میری دادی غضب کی مصورہ تھیں۔اور ان کی پینٹنگ میں سرخ،نیلا اور زرد رنگ اور کہیں کہیں سیاہ رنگ بہت استعمال ہوا تھا۔خیمے، آگ،صحرا،گھوڑے، دریا ، دربار اور بے سر وبے کفن لاشیں ان کے ہاں جدید مناظر کے اندر بھی جگہ جگہ آجاتی تھیں۔ان کی ایک تصویر میں ایک عورت کسی مزدور کی لاش پہ بیٹھی بین کرتی دکھائی اور جس رخ وہ بیٹھی ہے اس رخ پہ دور افق پہ بہت غور سے دیکھنے پہ پتا چلتا ہے کہ وہ مدینے میں محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا روضہ ہے اور اپنے مزدور شوہر پہ بین ڈالتی عورت زبان حال سے ‘یامحمدا ،یا محمدا’ کہہ رہی ہو جیسے اور اس کے ہردگرد بندوقوں کی سنگینیں تنی ہوئی دکھائی ہیں۔اور اس عورت نے ایک لمبی کالی چادر بین رکھی ہے اور اس پہ ڈاٹ بنے ہوئے ہیں۔بہت غور سے اگر ان نقطوں کو دیکھا جاتا تو پتا چلتا کہ ‘یا شریکۃ الحسین’ لکھا ہوا ہے۔فیکڑی سے دھویں کے بادل اٹھتے دکھائی دے رہیں اور پاس زمین پہ ادھر ادھر کافی لاشیں بکھری ہوئی ہیں۔اور ایک آدھا جلا ہوا بینر ہے جس پہ لکھا ہے’جب تک سابقہ اجرتیں نہیں ملیں گی، فیکڑی نہیں چلے گی۔’ اور ساتھ ہی ایک اخبار کا فرنٹ پیج جس کا آدھا حصّہ جلا ہوا ہے،بقیہ آدھے حصّے پہ مین ہیڈ لائن تھی،’ مزدروں کی آڑ میں شرپسندوں کی تخریب کاری ناکام،جوابی فائرنگ سے 50 شرپسند ہلاک ہوگئے۔حکومت سرمایہ داروں کا تحفظ کرے گی،ہڑتال کا اسلام میں کوئی تصور نہیں۔یہ روسی ایجنٹوں کی سازش ہے-مفتی اعظم پاکستان۔’بس جتنی کامپلیکس میری دادی کی پینٹنگ تھیں اتنا ہی کامپلیکس میں آپ بھی ہوں۔”





اس نے یہ سب سنکر گہری سانس لی اور کہنے لگی،



I heard from one of my senior comrade in JNU that a shia always be a Shia and never forget his/her Shia background either he joins communist gang or secular liberal gang.



میں یہ سب سنکر ہنس پڑا۔میں نے اسے بتایا کہ کسی حد تک اس کا یہ مشاہدہ درست ہے۔



‘تم کمیونسٹ گینگ یا سیکولر گینگ کے الفاظ کیوں استعمال کررہی ہو؟یہ دائیں بازو کا پروپیگنڈا ہے۔’


” تم پاکستانی لیفٹسٹ لڑکوں اور لڑکیوں کے ساتھ (اس نے ‘لڑکے’ بولا تو میری ہنسی چھوٹ گئی) ایک بڑا مسئلہ یہ ہے کہ تمہیں ہندوستان میں تقسیم کے بعد کی کمیونسٹ سیاست بارے جتنا کچھ پتا ہوتا ہے وہ ‘نری رومانویت’ ہوتی ہے۔پہلے سی پی آئی کے اندر جو شمالی ہندوستان کے ایلیٹ کامریڈ تھے یہ نہرو اور پھر اندرا گاندھی کے ساتھ ہوگئے اور اس کے بعد کرانتی کا نعرہ لگاکر ماؤاسٹ انقلاب لانے والے سی پی آئی ایم والے کارپوریٹ سرمایہ داروں کے دم چھلہ بن گئے اور آج ان کا ٹاٹا،برلا، امبانی سے کوئی جھگڑا نہیں ہے۔یہ آدی واسیوں، قبائلیوں،غریب کسانوں کی نام نہاد میگا پروجیکٹس کے زریعے بے دخلی میں کوئی مضائقہ خیال نہیں کرتے۔سرمایہ سے ان کی دوستی ہوگئی ہے اور ان کی سیاست کانگریس سے مختلف نہیں ہے اور ان کی شہری پرتیں کلاس بھی بدل چکی ہیں بس کامریڈ کا نام ان کے ساتھ لگا ہوا ہے۔بلکہ ریپسٹ،اپنی عورتوں کو دباکر رکھنے والے اکثر پاکھنڈی بھی ان کے پولٹ بیورو میں بیٹھے ہیں۔پارلیمانی سیاست نے ان کو کھوکھلا کردیا ہے۔ان میں سے ایسے بھی ہیں جو اب کمیونزم کا نام بھی نہیں لیتے اور لبرل ڈیموکریسی کے دلدادہ ہیں کبھی کبھی سوشل ڈیموکریٹ ہونے کا ناٹک کرتے ہیں۔تم کیفی اعظمی،سجاد ظہیر کی بیٹیوں کو لے لو۔یہ لوگ کب کا کمیونزم ترک کرچکے۔اب تو یہ سماج سدھارک این جی او ایکٹوسٹ ہیں بس۔مین سٹریم میڈیا کے چمکتے ستارے جو فیشن کے طور پہ انقلابی باتیں کرتے ہیں اور ماضی میں اپنے باپ دادا،ماں و دادی کی کمیونسٹ کاوشوں  کو اپنے حال کی  مڈل کلاس چوتیاپے کا جواز ڈھونڈتے ہیں۔یہ زیادہ سے زیادہ ہندوستان کی ایک ارب آبادی میں 20 کروڑ کی مڈل کلاس کی خواہشات کی عکس سوچوں کو خوبصورت پہناوے پہناتے ہیں۔اور کبھی کبھی نام لینے کو کسی غریب پہ پڑی مصیبت پہ ماتم بھی کرلیتے ہیں۔لیکن سسٹم سے نہیں لڑتے جو منظم طریقے سے اجرتی سستے مزدور پیدا کرتا اور لاکھوں کروڑوں لوگوں کو بے دخل کرتا رہتا ہے۔’


کامریڈ گیاتری ساؤنت ایسے باتیں کررہی تھی جیسے ہمارے ہاں عبدل نیشا پوری باتیں کرتا تھا یا ریاض الملک الحجاجی کے دقیق انگریزی بیانات میں اس کی جھلک ملتی تھی وہ ان جیسوں کے لیے لبرل کمرشل مافیا  کا مرکب لفظ استعمال کرتا تھا۔ویسے ہمارے ہاں تو باوا آدم ہی نرالا ہوگیا تھا۔یہاں ضیاع کا سیاسی جانشین دیکھتے دیکھے کامریڈ چی گیویرا ہوگیا تھا،جسے ایک باغی صحافی حیدر جاوید سید نے ‘کامریڈ چنگ چی گیڑوی (گیڑا پنجابی میں دھوکے کو کہتے ہیں) کا نام دیا تھا۔


‘یہ تم بیٹھے بیٹھے اچانک کہاں کھو جاتے ہو۔’،گیاتری نے پوچھا۔



کیا کروں ہندوستان کی کہانی سنتے سنتے میں پاکستان پہنچ جاتا ہوں اور وہاں کئی کردار میرے دماغ میں گھومنے لگتے ہیں۔  ویسے یہ بات کامریڈ گیاتری ساؤنت کرے تو سمجھ آتی ہے۔کوئی اور کرتا تو میں اسے دائیں بازو کا پروپیگنڈا خیال کرتا۔’،میں نے کہا۔

چلو میں تمہیں اس سے بھی آگے ایک اور بات بتاتی ہوں۔کامریڈ گیاتری نے کہا،’کیا تم کامریڈ ماؤزے تنگ کی ذاتی زندگی بارے کچھ جانتے ہو؟’۔اس نے سوال کیا؟


بس تھوڑا بہت۔



‘کامریڈ ماؤزے تنگ عورتوں بارے انتہائی فضول خیالات رکھتا تھا۔وہ نوجوان لڑکیوں کا بہت دلدادہ تھا۔اس کی جنسی زندگی بہت ہی خوفناک تھی۔تمہیں پتا ہے کہ وہ دنیا بھر میں جنسی ادویات کی دریافت کی خبریں شوق سے جمع کرتا اور اپنے بیڈ کے ساتھ ٹیبل پہ جنسنگ ڈرگز کو اکٹھے کیا رکھتا تھا۔اس نے اپنے بیٹے کی محبوبہ سے شادی کرلی تھی جسے اس کی منہ بولی بیٹی خیال کیا جاتا رہا تھا۔وہ اپنے بیٹے سے اس وقت انتہائی جیلس ہوگیا جب اسے پتا چلا کہ وہ اس کی منظور نظر سے شادی کرنے جارہا ہے۔اور جب 1953ء کی جنگ میں شادی سے پہلے اس کا بیٹا مارا گیا تو اس نے کہا کہ جنگ میں ہم اور کیا توقع رکھتے ہیں۔وہ نوجوان لڑکوں کو رات کو مساج کے لیے بلواتا اور ان سے اپنے خصیوں کا مساج کرنے کو کہتا تھا اور نوعمر، نوخیز لڑکیوں کا ایک ہجوم اپنے گرد اکٹھا رکھتا تھا۔عورتیں اسے بس جنسی استعمال کی چیز معلوم ہوتی تھی۔’

This is dirty capitalist propaganda Comrade, I can’t believe on it.

 میں نے انتہائی غصّے سے کہا تو اس نے کہا کہ یہ باتیں ویت نام  انفو ویب سائٹ پہ


ایک کمیونسٹ بلاگر نے لکھی ہیں۔



Đời sống tình dục quái đản của hoàng đế Mao Trạch Đông

Mao Zedong’s horrible sexual life

Nguồn: Blog Đặng Xuân Xuyên

Source: Blog Dang Xuan Xuyen

یہ کوئی کمیونسٹ نہیں ہے۔میں نے موبائل فون پہ بلاگ چیک کرنے کے بعد کہا اور تم یہاں اپنے تلخ تجربات کے سبب ماؤ کے بارے میں کہانی کو سچ سمجھ بیٹھی ہو۔


‘ہوسکتا ہے اس میں 99 جھوٹ ہوں مگر ایک فیصد سچ ضرور ہے۔ماؤ بہرحال فیمنسٹ مارکسسٹ نہیں تھا۔’،اس نے ذرا غصّے میں کہا۔


اس میں ہنسنے کی کیا بات ہے۔


مجھے تمہارے اس انداز پہ پاکستان میں حیدرآباد سندھ کی کچھ فیمنسٹ خواتین ایکٹوسٹ یاد آگئیں۔بہت شاندار اور انتہائی زبردست ایکٹوسٹ ہیں لیکن جب کبھی ان پہ بورژوازی فیمنسٹ آسیب بنکر چھاتا ہے تو ان کو ہر مرد ‘عورتوں کا شکاری’ لگتا ہے۔اور ایک دم سے ان کے ہاں معروضیت غائب ہوجاتی ہے۔ویسے لاہور اور اسلام آباد میں بھی ایسی عورتیں ہیں جن کے سر پہ مردوں کو دیکھ کر خون سوار ہوجاتا ہے۔اور پھر کلاس /طبقے کا سوال پدرسریت کے تابع ہوجاتا ہے۔ماؤ ویسے شکل سے کافی بارعب مرد لگتا تھا۔